امام خُمینی کی رہائی کے بعد قم واپسی

ترجمہ: ابو زہرا علوی

2022-03-13


۴/۴/۱۹٦۴ کی آخری شب میں ہم  مدرسہ مھدیہ میں تھے۔ رات تھی۔  مدرسے کا بلب مدھم مدھم سی روشنی دے رہاتھا۔  اچانک ایک آواز سنی۔ آواز کے سنتے ہی باہر سے شور کی آواز آنے لگی ہم باہر نکلے۔  ایک ٹیکسی ڈرائیور تھا جو چیخ چیخ کر کہہ رہا تھا:  "طلاب اکرام،  خوشخبری،  حضرت آیت اللہ العظمیٰ روح اللہ خُمینی کو آزاد کردیاگیاہے۔"

ہمیں اپنے جوتوں کا  ہوش نہیں تھا یہ سنتے  ہی انکے گھرکہ جو یخچال قاضی میں تھا دوڑ پڑے۔  جو  چیز میرے لئے جالب تھی کہ بہت سے پُراخلاص لوگ ایسے بھی تھے جووضو کر رہے تھے۔ ہمیں کچھ ہوش  نہیں تھا، بس امام خُمینی کی زیارت کرنے کے شوق میں یخچال قاضی میں انکے گھر کی جانب دوڑے جارہے تھے،  ہم امام خُمینی کے گھرکی جانب رواں دواں تھے۔  حضرت امام خُمینی ایک لکڑی کے اسٹول پر کھڑکی کے سامنے بیٹھے تھےاس طرح کہ جو بھی کمرے میں داخل ہوتاوہ آپ کو دیکھتا انکے گھر کے روازے پر زیارت کرنے والوں کا ایک جمع غفیر تھا۔  اس رش میں ایک بوڑھا بھی تھا حضرت امام خُمینی کو دیکھتے ہی اس نے قمی لہجے میں تین مرتبہ کہا:  "آقا جان کجا بودی؟  یعنی آغا آپ کہاں تھے؟ یہ کہا اور بےہوش ہوگیا لوگ اس بوڑھے کو اُٹھاکر ہسپتال لےگئے۔  امام خُمینی کی رہائی لوگوں کے لئے ایک عید لے کر ائی تھی۔  گاؤں دیھات سے بھی لوگ جوق در جوق امام خُمینی کی حمایت میں پلے کارڈ اٹھا اسپیکروں پر نعرے لگاتے امام خُمینی کی زیارت کے لئے قم آرہے تھے۔  قم کے ہر محلے میں یکے بعد دیگرے  جشن منایا گیاتھا۔

ان شرائط میں معلوم تھا کہ حوزہ بھی ایک شاندار جشن منائے۔  طے پایاکہ یہ جشن مدرسہ فیضیہ میں منایاجائے۔  اس بات کی پیشنگوئی تھی کہ جشن کے دن بجلی اور پانی کہ جو ساواک کے کنٹرول میں تھا کاٹ دیا جائے اور جشن درھم برھم ہوجائے۔

اس رات ہمارے ایک دوست جناب شیخ علی رزاقی،  نے امام خُمینی کی شان میں بہترین اشعار کہے جو انھوں جناب حجتی کے مقالے سے پہلے کہے:

شکرلله جان جانان در جهان، جان جهان شد

جسم بی‌جان جهان با نرخ جان دارای جان شد

ماهی از چاهی برآمد جلوه‌گر در آسمان شد

از پس ابر حوادث، خسرو خاور عیان شد

نسل موسی مثل موسی منجی بیچارگان شد

از دم روح‌الهی، جان به جسم مردمان شد

اللہ  کا  شکر کہ اس نے اس دنیا میں زندگی  عطاکی، بے جان جسم میں ایک روح پھونکی گئی،  کنویں کی تہہ سے ایک مچھلی نکلی اور آسمان پر چمک اُٹھی، ایسے واقعات رونما ہوئے کہ خسروخاورعیاں ہوگئے،  موسیٰ کی نسل سے موسیٰ کی مانند غریبوں کا نجات دھندہ بنا،  روح الہی کے دم سے  روح  لوگوں کے جسم کا جزبنی گئی۔

یہ اشعار بہت اچھے تھے اور مناسبت سے پڑھے گئےتھے۔  اس کے بعد ایک قرارداد پڑھی گئی کیونکہ یہ قرارداد امام خُمینی کی مرضی کی خلاف پڑھی گئی تھی،  اس لئے انہیں اچھی نہیں لگی۔  اس کے بعد جناب خز علی ممبر پر تشریف لے گئے۔  میری نظر میں اس شب کے قہرمان جناب خزعلی تھے۔  انھوں نے اپنی تقریر کی ابتدا قرآن کی اس آیت سے کی جو اس وقت بہت زیادہ مناسب تھی«و اوحینا الی ام موسی ان ارضعیه فاذا خفت علیه فالقیه فی الیم و لاتخافی و لا تحزنی انا رادوه الیک و جاعلوه من المرسلین».[1]

جناب خز علی نے آیت کا معنیٰ  کیا اور امام خُمینی کے جانے اورانے کو جناب موسی کے جانے اورانے سے  تشبیہ دی اور کہا:  "موسی کی ماں نے خدا سے حکم سے جناب موسیٰ کو دریائے نیل میں بہادیا سالوں بعد خدانے جناب موسیٰ کو کلیم اللہ اور رسول اللہ بنا کر واپس پلٹایا،  روح اللہ گرفتار ہوئے مگر خدا کے ارادے سے قم واپس پلٹ آئے جبکہ آپ بہت مشہور مرجع تقلید ہوگئے۔  یہ سنتے ہی لوگوں نے  دورد پڑھا۔

اسی طرح جناب خز علی نے سورہ مریم کی ۱٦ویں اور ۱۹ ویں آیت کا ذکرکیا: «واذکر فی الکتاب مریم اذ انتبذت من اهلها مکاناً شرقیاً[2]فاتخذت من دونهم حجاباً فارسلنا الیها روحنا فتمثل لها بشراً سویا[3] قالت انی اعوذ بالرحمن منک ان کنت تقیا[4] قال انما انا رسول ربک لاهب لک غلاماً زکیا[5]»

جناب خز علی نے ان آیات کو رشد اور امام خُمینی کے ابھرنے کو حضرت عیسیٰ کے بیت المقدس میں رشد سے تشبیہ دی اور کہا:  "حضرت معصومہ سلام اللہ علیہا قم میں آرام فرمارہیں تھیں۔  انھوں نے اپنی آنکھوں کو کھولا اور دیکھا کی شیخ عبدالکریم حائری قم تشریف لائے تو کہا:  اے شیخ کیوں قم آئے ہو؟  تم نہیں جانتے کہ رسول اللہ نے فرمایا ہے«وما قصد جبار بسوء الاقصمه قاصم الجبارین»؛ ظالمین قم کے بارے میں برا ارادہ رکھتے ہیں،  انکی بنیادیں ہلا دی جائیں گی؟  کیا آپ نہیں جانتے کہ یہاں خیانت کی گنجائش نہیں؟  تم کون ہو اور کیوں یہاں آئے ہو؟  شیخ عبدالکریم حائری نے جواب دیا:  " آپ پریشان ناہوں میں شیخ عبدالکریم ہوں۔  میں اللہ کی جانب سے حق پہنچانے آیا ہوں اور عیسی روح اللہ کی مانند روح اللہ خُمینی امانتدار کی پرورش کرونگا"«قال انما انا رسول ربک لاهب لک غلاماً زکیا»جناب خز علی نے اس طرح کنایات و تمثیلات و استعارات اور قرآنی موضوعات کے ذریعے سے امام خُمینی کی  تحریک کو بیان کیا۔

 

منبع: مهدی قیصری، خاطرات حجت‌الاسلام و المسلمین سیدمحسن موسوی‌فرد (کاشانی)، تهران، انتشارات مرکز اسناد انقلاب اسلامی، چاپ اول، 1387، ص 53 – 58

 



 
صارفین کی تعداد: 495


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 
ملتان میں شہید ہونے والے اسلامی جمہوریہ ایران کے کلچرل اتاشی شہید رحیمی کی اہلیہ کی روداد

ملتان کا مصلح، بیسواں حصہ

ہندوستان میں گذارے ہوئے آخری سالوں میں ہمیں کئی ایک تلخ تجربات ہوئے  جیسے جنگ بندی کی قرارداد اور اس پر امام  خمینی کا ناخوش ہونا، خود امام خمینی کی رحلت اور ۱۳۶۹ میں پاکستان کے صوبہ پنجاب میں تعینات ایرانی  سفیر شہید گنجی کی لاہور میں شہادت۔

جناب عبداللہ صالحی صاحب کی ڈائری سے انتخاب شدہ

یہ ایک معمولی سپاہی تھا جسے ٹیلی فون کی تار سے الٹا لٹکایا گیا تھا۔ اس بے چارے سے کیا معلومات ملنی تھیں انکو۔ خیر، ہم نے جب حملہ کیا تو وہ تو بھاگ گیے لیکن یہ سپاہی بیچارا لٹکا رہ گیا۔ ابھی زندہ تھا۔ جیسے تیسے اسے نیچے اتارا۔ ٹیلی فون کی تار گوشت کو کاٹ کر اس کے پاؤں کی ہڈیوں تک پہونچا چکی تھی

کہنے لگا: اسکا دل بہت دھڑک رہا ہے۔۔۔۔۔۔

ایک پولیس والے نے پستول کے بٹ سے میرے سر پر مارا ۔ مجھے احساس ہوا کہ جیسے یہ لوگ حقیقت میں مجھے مارنا چاہتے ہیں ۔ میں نے اپنے آپ سے کہا اب جب مارنا ہی چاہتے ہیں تو کیوں نہ میں ہی انہیں ماروں۔ ہمیں ان سے لڑنا چاہئے۔ میرے سر اور چہرے سے خون بہہ رہا تھا اور میں نے اسی حالت میں اٹھ کر ان دو تین سپاہیوں کا مارا۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۷ واں پروگرام

کیمیکل بمباری کے عینی شاہدین کے واقعات

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۷ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۲ نومبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۷ دسمبر کو منعقد ہوگا۔"
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۹ واں پرواگرام (۱)

ایک ملت، ایک رہبر اور ایک عظیم تحریک

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۹ واں پروگرام، جمعرات کی شام، ۲۴ جنوری ۲۰۱۹ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اس پروگرام میں علی دانش منفرد، ابراہیم اعتصام اور حجت الاسلام و المسلمین محمد جمشیدی نے انقلاب اسلامی کی کامیابی کیلئے جدوجہد کرنے والے سالوں اور عراقی حکومت میں اسیری کے دوران اپنے واقعات کو بیان کیا۔

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔