امام خمینی رح کے نام پر پہلی بار صلوات

ترجمہ: یوشع ظفر حیاتی

2022-06-23


امام خمینی رح کے نام پر صلوات کا سلسلہ سن ۱۳۴۲ میں بیرجند شہر کی ایک عمومی محفل میں ہوا جو ایک اہم تاریخی واقعہ شمار ہوتا ہے۔ کم از کم میں جو مختلف جگہوں پر مجالس پڑھا کرتا تھا، مجھے ایسا کوئی واقعہ سننے کو نہیں ملا۔ ہوا کچھ اس طرح کہ مجھے خبر ملی ایک طالب علم نے امام خمینی رح کی توہین کی ہے اور انکی مرجعیت پر سوال اٹھایا ہے؟ میں یہ خبر سن کر بہت زیادہ رنجیدہ ہوگیا اور اس بات کا انتظار کرنے لگا کہ موقع پا کر مناسب وقت پر ایسی فضول بات کرنے والے کا جواب دوں گا۔ کچھ عرصے کے بعد ایک مناسبت پر مجھے مسجد آیت اللہ آیتی میں مجلس پڑھنے کے لئے بلایا گیا۔ میں نے مرجعیت کے دفاع کے لئے مصمم ارادہ کیا اور جب میں منبر پر جا کر بیٹھا تو اپنے آپ کو اس اہم کام کے لئے تیار کیا۔ خاص طور پر جب میں نے دیکھا کہ مسجد لوگوں سے بھر گئی ہے اور بعض اہم شخصیات من جملہ آیت اللہ شیخ محمد حسین ضیاء آبادی صدر نشین ہیں مجھے بہت زیادہ سکون اور اطمئنان قلب حاصل ہوا۔ سادہ الفاظ میں کہوں تو میری اندر بہت زیادہ جرات پیدا ہوگئی تھی۔ چونکہ بلند مرتبہ شخصیات کی موجودگی کی وجہ سے اس مجلس کا وقار ویسے ی بڑھ گیا تھا اور منبر پر بیٹھنے والے کے اعتماد نفس اور شہامت میں اضافہ ہوگیا تھا کہ وہ سیاسی اور سماجی مسائل کی جانب اشارہ کرسکے۔

صورتحال ہر طرح سے بہترین تھی۔ لہذا میں نے موقع غنیمت جانتے ہوئے اس فرد کو مخاطب کرتے ہوئے جس نے امام خمینی رح کی توہین کی تھی کہا: " تم ہوتے کون ہو جو اس طرح کی فضول بات کرو؟ جو کوئی بھی ہو یہ اچھی طرح جان لو کہ تمہاری اوقات نہیں ہے کسی بھی مرجع تقلید کے لئے اظہار نظر کرو چہ برسد ان کی توہین کرو۔ تمہاری تو اتنی اوقات بھی نہیں ہے کہ جانوروں کو تمہارے ہاتھ سے چارہ کھلایا جائے۔" پھر میں نے اپنی بات آگے بڑھاتے ہوئے مراجع تقلید کے نام لینا شروع کئے اور پھر بہت مصمم اور جوشیلے انداز سے کہا: "ان مراجع عظام میں آیت اللہ العظمی خمینی شامل ہیں" اچانک حاضرین مجلس نے نہایت بلند آواز سے صلوات پڑھی۔ ایسا لگ رہا تھا کہ مسجد کے ستون ہل رہے ہیں۔ میں نے اس سے پہلے ایسی صورتحال کبھی نہیں دیکھی تھی یہ اپنے آپ میں ایک حیرت انگیز اور منحصر بہ فرد واقعہ تھا۔ ظاہرا کسی نے سوچا بھی نہیں تھا کہ پہلی مرتبہ مغیر کسی منصوبہ بندی کے امام خمینی رح کے نام پر ایسا رد عمل دیکھنے کو ملے گا۔

اگلے دن آقائے صالحی کے اصرار پر میں اپنے گھر سے باہر نکلا۔ سیکیورٹی اہلکاروں نے میرا پیچھا کرنا شروع کیا اور بالآخر مجھے تھانے بلایا گیا۔ میں بھی بغیر کسی ہچکچاہٹ کے تھانے پہنچ گیا۔ تھانہ خیابان مطہری پر اور ہمارے گھر کے نزدیک ہی تھا۔ اس وقت اطلاعات کا انچارج سبحانی نام کا ایک افسر تھا جو ساواک کا ایجنٹ تھا اور یہاں سے مسلسل رپورٹیں بنا کر مرکز کو ارسال کیا کرتا تھا۔ میرے تصور کے برخلاف وہ بجائے اسکے کہ مجھ سے سخت برتاؤ کرتا بہت آرام سے مجھ سے پوچھنے لگا: "جناب دیانی ہم بھی مسلمان ہیں لیکن اس جگہ ہم مجبور ہیں، میں آپ کو نصیحت کروں گا کہ دوبارہ یہ بات کریں۔" وہ مجھے ڈرا رہا تھا لیکن میں نے اس کی بات کی پرواہ کئے بغیر اگلے دن مسجد خواجہ ھا میں تقریر کرنے پہنچ گیا۔

 

 

منبع: اسداللهی گازار، احمد،‌ مریم سبحانیان، شیخ اسماعیل، تهران، سوره مهر، 1400، ص 159 - 160.

 



 
صارفین کی تعداد: 232


آپ کا پیغام

 
نام:
ای میل:
پیغام:
 
حسن مولائی کی یادیں

سو افراد، سینکڑوں افراد، ہزاروں

وہ لوگ جو چند گھنٹوں پہلے جمرات جا رہے تھے تاکہ رمی جمرات کا فریضہ ادا کرسکیں اب تولیہ اوڑھے سو رہے تھے۔ جب جنازے ختم ہوئے، تو مجھے سمجھ نہیں آئی کہ مجھے کہاں لوٹنا چاہئیے۔ اچانک میرے پیروں نے کام کرنا چھوڑ دیا اور میں نے پہلی مرتبہ وہاں گریہ کرنا شروع کردیا۔ واپس پلٹ کر ان سفید پیکروں کو دیکھنا شروع کیا۔ پوری سڑک جنازوں سے سفید ہوچکی تھی۔ ایک جوان مرد کی آواز پر چونکا جو میرے ساتھ کھڑا تھا اور میرے پیروں کے سامنے چپلیں رکھ رہا تھا۔
حجت الاسلام والمسلمین جناب سید محمد جواد ہاشمی کی ڈائری سے

"1987 میں حج کا خونی واقعہ"

دراصل مسعود کو خواب میں دیکھا، مجھے سے کہنے لگا: "ماں آج مکہ میں اس طرح کا خونی واقعہ پیش آیا ہے۔ کئی ایرانی شہید اور کئی زخمی ہوے ہین۔ آقا پیشوائی بھی مرتے مرتے بچے ہیں

ساواکی افراد کے ساتھ سفر!

اگلے دن صبح دوبارہ پیغام آیا کہ ہمارے باہر جانے کی رضایت دیدی گئی ہے اور میں پاسپورٹ حاصل کرنے کیلئے اقدام کرسکتا ہوں۔ اس وقت مجھے وہاں پر پتہ چلا کہ میں تو ۱۹۶۳ کے بعد سے ممنوع الخروج تھا۔

شدت پسند علماء کا فوج سے رویہ!

کسی ایسے شخص کے حکم کے منتظر ہیں جس کے بارے میں ہمیں نہیں معلوم تھا کون اور کہاں ہے ، اور اسکے ایک حکم پر پوری بٹالین کا قتل عام ہونا تھا۔ پوری بیرک نامعلوم اور غیر فوجی عناصر کے ہاتھوں میں تھی جن کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں تھا کہ وہ کون لوگ ہیں اور کہاں سے آرڈر لے رہے ہیں۔
یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام

مدافعین حرم،دفاع مقدس کے سپاہیوں کی طرح

دفاع مقدس سے متعلق یادوں بھری رات کا ۲۹۸ واں پروگرام، مزاحمتی ادب و ثقافت کے تحقیقاتی مرکز کی کوششوں سے، جمعرات کی شام، ۲۷ دسمبر ۲۰۱۸ء کو آرٹ شعبے کے سورہ ہال میں منعقد ہوا ۔ اگلا پروگرام ۲۴ جنوری کو منعقد ہوگا۔